مشرف کا ایک بیان ، دھرنے اور فوج

آج کل پرویز مشرف کی انڈین میڈیا پر انٹرویو کی تعریفیں کی جاری ہیں، کرنی بھی چایئے، انڈیا ہمارا دشمن ملک جو ہے … پر کیا یہ دوغلا پن نہیں؟ اگر ہے تو کیوں ہے؟

 مجھے وکی لیکس کا وہ بھی بیان یاد ہے مشرف دور کا ، نواز شریف دنیا کے لئے خطرہ ہے ، بنا داڑھی کے ملا ہے  اور ملک کے لیے سوچتا ہے مشرّف ، بینظیر سے واحد سپر پاور امریکا کو کوئی خطرہ نہیں…بلکہ وہ وہی کریں گے جو ان کو کہا جائے گا

 مسئلہ لیڈران نہیں ہم خود ہیں جو غیر ملکی طاقتوں کے ہاتھوں کٹھپتلی بن کر اپنے پیروں پر کلہاڑیاں مارتے ہیں ، اب دھرنوں سے جو ملک کا نقصان ہوا نا تو نواز نا عمران اور نا قادری کو ہوگا، بلکہ اصل میں اس ملک کو ہورہا ہے جس کے تین بارڈر پر پڑوسی ممالک گولہ باری کرکے ہماری پہلےسے مصروف آرمی کو لڑنے کے لیے اکسا رہے ہیں اور یہی سازش ملک میں بیٹھے سیاسی یتیم ، عمران ، قادری اور چودری برادران، میڈیا کی چند بدنام اینکرز اور میڈیا گروپس کے ساتھ مل کر کر رہے ہیں، فوج کو اکسا رہے ہیں کے آؤ اور قبضہ کرلو اقتدار پر اور عوام جو پہلے ہی چالیس سال آرمی کے تجربات سے تنگ ہے وہ اپنی ہی فوج کے سامنے کھڑے ہوجائیں، اور ایسے فوج بیرونی اور اندورنی محاذوں میں الجھ جائے اور ملک کے ٹکڑے ہوجائیں

 یہ سب ہم جس دن سمجھ گئے …. اسی دن ہماری جیت ہو جائے گی

 اچھا بات مشرف کی ہو رہی تھی

یہ جو حال اس وقت ہے مشرف کی ہی وجہ سے ہے …وہ کیسے پڑھ لیں :

غیروں کے کہنے پر اپنے ہوائی اڈے دیئے گئے (ایر بیس وغیرہ) تاکہ امریکا بہادر ہمارے پڑوسی ملک میں حملے کرسکے اور لاکھوں بیگناہ لوگ مارسکے اور وہی ہوائی اڈے بعد میں ڈرون کے لیے استمال ہوئے جن کا ہدف افغانستان نہیں بلکہ پاکستان کے علاقہ غیر تھے اور ہم نے اپنے لوگ ہی مروائے،قومی غیرت بیچ کر  دوسرے ملک کو اپنے ملک میں کروائی کی کھلی چھٹی دی… جس کے جواب میں ہماری قوم کو پچاس ہزار جانوں کی قربانی دینا پڑی

اس کے دور میں را، موساد، بلیک واٹر جیسی ایجنسیوں نے اپنے پیر ملک میں جمائے…ان کو ہزاروں ویسے دیے، اجازت دی کے جہاں کروائی کرنی ہے کرو…جو اب بھی بلوچستان کراچی میں سر گرم ہیں، تاکے ملک کو توڑا جا سکے، فرقہ واریت پہلے، لسانی فساد ہوں ، ملک میں انتشار ہو

اسی کے دور میں انڈیا نے ہمارے پانی پر قبضے کئے جو اب جب دل کرے پانی چھوڑ دیتے ہیں اور ملک میں سیلاب آجاتے ہیں

مشرف ہی نے مقبوضہ کشمیر کے بارڈرز پر انڈیا کو آہنی باڑھ لگانے کی اجازت دی اور بےغیرتوں کی طرح ان کو  باڑھ لگاتے ہوئے دیکھتے رہے اور پوری دنیا کو پیغام دیا کے کشمیر انڈیا کا ہے اور کشمیر کاز کو ختم کرکے رکھ دیا ، اخباروں میں کشمیر کی آزادی کی جدوجہد کے بارے میں لکھنے پر پابندی لگا دی

ملک کو اور  اسلام کو بد نام کیا: لال مسجد میں معصوم بچیوں کو گییس سے مارا

ہزاروں پاکستانی ڈالر کے بدلے امریکا کو بیچے، عافیہ صدیقی کے ساتھ جو ظلم ہوئے وہ الگ کہانی ہے، کیسے اس کو کراچی سے بچوں سمیت اغوا کیا گیا اور کیسے مردوں کی جیل میں اس پر ظلم ہوئے، بچوں کے ساتھ کیا ہوا وغیرہ

ڈاکٹر قدیر جسے اس محسن کو جس کی وجہ سے ہم پوری دنیا میں سر اٹھانے کے قابل ہوئے اس کو نظر بند کر دیا، ان سے مافی منگوائی کے انہوں نے ایٹم بم کی ٹیکنالوجی ایران اور لیبیا کو بیچی ہے، جب کے ایک اکیلا سائںس دان بغیر آرمی کی مدد کے ایسا کر ہی نہیں سکتا

 بہرحال مشرف سے عوام کی نفرت ایک انڈیا مخالف بیان سے جانے والی نہیں ہے ، یہ اس کی اور اس کے جوتے چاٹنے والوں کی  خام خیالی ہے

 خیر اب آپ خود سوچھیں ہمیں ایک ہو کر ایک قوت بننا ہے یا یوںہی دن رات ایک دوسرے پر الزام اور گالیاں دینی ہیں؟ اور غیر ملکی طاقتوں کو مظبوط کرنا ہے ؟

جزاک اللہ خیر

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s